Home انٹرنیشنل اسرائیل کی سپریم کورٹ میں مستقل نشست پر مسلمان جج تعینات

اسرائیل کی سپریم کورٹ میں مستقل نشست پر مسلمان جج تعینات

اسرائیل کی اعلیٰ ترین عدالت سپریم کورٹ میں مستقل جج کی نشست پر مسلمان خالد کابوب کو تعینات کردیا گیا۔

خبرایجنسی اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق اسرائیل کے سپریم کورٹ کے حکام نے بتایا کہ مسلمان جج کو سپریم کورٹ میں مقرر کردیا گیا ہے جو یہودی اکثریتی ملک میں پہلا مسلمان جج ہیں۔

مزید پڑھیں: اسرائیل میں مسلمان خاتون عدالت کی جج مقرر

اسرائیل کے 20 فیصد سے زائد شہری عرب ہیں جہاں 2003 کے بعد عرب جج کو اعلیٰ عدالت میں ذمہ داری دی گئی ہے جبکہ اس سےقبل تعینات ہونے والے تمام عرب جج عیسائی مذہب سے تعلق رکھتے تھے۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ 63 سالہ خالد کابوب مستقل جج بننے والے پہلے مسلمان ہیں جہاں عرب، عیسائی اور مسلمانوں کی جانب سے شکایت کی جاتی ہے کہ ان کے ساتھ منظم تفریق برتی جاتی ہے۔

خالد کابوب اس سے قبل تل ابیب میں جج کے فرائض انجام دے رہے تھے اور سپریم کورٹ میں تعینات ہونے والے 4 ججوں میں شامل ہیں جنہیں سپریم کورٹ کے ججوں، وزیروں، قانون سازوں اور وکلا پر مشتمل کمیٹی نے منتخب کیا۔

اسرائیلی سپریم کورٹ میں مستقل جج تعینات ہونے والے خالد کابوب یافہ میں پیدا ہوئے، تل ابیب یونیورسٹی میں تاریخ اور اسلام پر تعلیم حاصل کی، قانون کی ڈگری بھی وہیں سے حاصل کی، پھر جج بننے سے قبل نجی پریکٹس کی۔

اس سے قبل اسرائیلی سپریم کورٹ میں تعینات ہونے والے واحد مسلمان عبدالرحمٰن زوئبی تھے، جنہیں 1999 میں ایک سال کے لیے عبوری طور پر تعینات کیا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: اسرائیل اور متحدہ عرب امارات کے درمیان ‘تاریخی امن معاہدہ’

اسرائیل کی سپریم کورٹ میں اسرائیل اور فلسطین کے درمیان بدترین تنازعات سمیت مقبوضہ مغربی کنارے میں اسرائیلی فوجیوں کی خلاف ورزیوں کے کیس پر سماعت ہوتی ہے۔

عدالت میں فلسطینی خاندان کے ان 7 افراد کا کیس پر زیرسماعت جو نچلی عدالتوں کے فیصلے کے خلاف دائر کیا گیا، جس میں فلسطینی شہریوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

متاثرہ فلسطینی خاندان کو مشرقی بیت المقدس سے منسلک شیخ جراہ کے کشیدگی کے علاقے میں قائم ان کے گھروں سے بے دخل کیا گیا تھا۔

اسرائیل نے 2017 میں شرعی عدالتی نظام کے تحت تاریخ میں پہلی مرتبہ ایک مسلمان خاتون کو جج مقرر کردیا تھا۔

شمالی قصبے تیمرا سے تعلق رکھنے والی ایک قانون دان حانا خطیب کو تین مردوں کے ساتھ جسٹس کمیٹی میں منتخب کیا گیا تھا اور انہیں اسرائیل میں مسلمانوں کے عائلی قوانین کے لیے عدالت کی قاضی (مذہبی امور) مقرر کیا گیا تھا۔

اسرائیل میں عائلی قوانین طلاق، شادی اور نان نفقہ کے مسائل شرعی عدالتوں کے زمرے میں آتے ہیں اور مختلف طبقات کے لیے الگ نظام موجود ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Must Read

جنگل کی خوشبو

تحریر؛ پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیمیں آرام دہ جو گر نرم و گداز جیکٹ اور ریشمی مفلر سے لیس ہو کر قریبی...

نہ سدھرے توسب بکھر جائے گا !

تحریر؛ شاہد ندیم احمدتحریک انصاف صوائی اسمبلیوں کی تحلیل کے اعلان کے بعد سے شش وپنج میں مبتلا ہے ،اس بات...

نہ سدھرے توسب بکھر جائے گا

تحریر؛ راہیل اکبرلاہور والوں نے بھی عجیب قسمت پائی ہے اس شہر سے جتنے وزیر اعظم بنے ہیں شائد ہی پاکستان...

لاہور کا پہلا نمبر

تحریر؛ راہیل اکبرلاہور والوں نے بھی عجیب قسمت پائی ہے اس شہر سے جتنے وزیر اعظم بنے ہیں شائد ہی پاکستان...

سرائے ادب اور مقام اقبال

تحریر؛ ناصر نقویہمارے معاشرے میں بدقسمتی سے ادب آداب پر بحث و مباحثہ تو ہوتا ہے اور دھواں دار ، چونکہ...