Home پاکستان کسی کو ووٹ دینے سے روکا نہیں جاسکتا، سپریم کورٹ کا صدارتی...

کسی کو ووٹ دینے سے روکا نہیں جاسکتا، سپریم کورٹ کا صدارتی ریفرنس پر لارجر بینچ بنانے کا فیصلہ

اسلام آباد (کورٹ رپورٹر)چیف جسٹس پاکستان عمرعطا بندیال نے کہا ہےکہ کسی کو ووٹ دینے سے روکا نہیں جاسکتا، سپریم کورٹ میں تحریک عدم اعتماد سے قبل جلسے روکنے کیلئے سپریم کورٹ بار کی درخواست پرسماعت جاری ہے۔

چیف جسٹس نےکہا کہ پارلیمنٹ آئین کے تحت سب سے مرکزی ادارہ ہے، پارلیمنٹ کا کام آئین اور قانون کے مطابق ہونا چاہیے، پارلیمنٹ میں سیاسی جماعتوں کے بھی حقوق ہوتے ہیں، آرٹیکل 63 اے پارٹیوں کے حقوق کی بات کرتا ہے، کسی کو ووٹ دینے سے روکا نہیں جاسکتا۔

عوامی مفاد میں کسی صورت سمجھوتہ نہیں ہونا چاہیے، عوام کا کاروبار زندگی بھی کسی وجہ سے متاثر نہیں ہونا چاہیے، سماعت کےدوران وکیل بار کی جانب سے آرٹیکل 66 کا حوالہ دیا گیا اس پرجسٹس مینب اخترنےکہا کہ آرٹیکل 66 کے تحت ووٹ کا حق کیسے مل گیا؟ آرٹیکل 66 تو پارلیمانی کاروائی کو تحفظ دیتا ہے، آرٹیکل 63 اے کے تحت تو رکن کے ووٹ کا کیس عدالت آسکتا ہے۔

چیف جسٹس نےکہا کہ آپ تو بار کے وکیل ہیں آپکا اس عمل سے کیا تعلق؟ بار ایسوسی ایشن عوامی حقوق کی بات کرے۔ اس پروکیل سپریم کورٹ بار نےکہا کہ تحریک عدم اعتماد بھی عوامی اہمیت کا معاملہ ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ آرٹیکل 63 اے کی تشریح کےلیے صدارتی ریفرنس پرسماعت کےلیے لارجر بینچ بنائینگے، اس ریفرنس پر تمام سیاسی جماعتوں کے وکیل تیاری کریں، صدارتی ریفرنس میں قانونی سوالات کیے گئے ہیں، سندھ ہائوس پرحملے کے معاملے پرایڈووکیٹ جنرل سندھ کی بات میں وزن ہے۔

اٹارنی جنرل نےسپریم کورٹ میں کہا ہےکہ اسمبلی اجلاس کے موقع پر کوئی جھتہ اسمبلی کے باہر نہیں ہو گا، کسی رکن اسمبلی کو ہجوم کے زریعے نہیں روکا جائے گا، اٹارنی جنرل نےکہا کہ سندھ ہاوس پر حملے کا کسی صورت دفاع نہیں کرسکتا، وزیر اعظم کو عدالت کی تشویش سے آگاہ کیا، وزیر اعظم نے کہا پرتشدد مظاہرے کسی صورت برداشت نہیں، سندھ ہاوس جیسا واقعہ دوبارہ نہیں ہونا چاہیے۔

کسی سیاسی جماعت کی وکالت نہیں کروں گا، آئی جی اسلام آباد نےعدالت میں کہا ہےکہ سندھ ہاؤس واقعہ پر شرمندہ ہیں، چیف جسٹس پاکستان نےکہا کہ سندھ ہاؤس واقعہ پولیس کی اتنی ناکامی نظر نہیں آتا، اصل چیز اراکین اسمبلی کو ووٹ ڈالنے سے روکنے کا ہے، ڈی چوک پر ماضی قریب میں بھی کچھ ہوا تھا جس کے تاثرات سامنے آئے، اٹارنی جنرل نے کہا کہ پولیس اور متعلقہ اداروں کو احکامات جاری کردیے ہیں، عوام کو اسمبلی اجلاس کے موقع پر ریڈزون میں داخلے کی اجازت نہیں ہو گی۔

چیف جسٹس نےکہا کہ سیاسی جماعتیں اپنی سیاسی طاقت پارلیمنٹ میں ظاہر کریں، سیاسی جماعتیں بتائیں وہ کیا چاہتی ہیں، پولیس کسی رکن اسمبلی پر ہاتھ نہیں اٹھا سکتی ہے، رکن اسمبلی قانون توڑے گا تو پولیس بھی ایکشن لے گی، عدالت نے سیاسی قیادت کے درمیان ثالث کا کردار ادا کرنا ہے تاکہ جمہوریت چلتی رہے ، حساس وقت میں مصلحت کیلئے کیس سن رہے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Must Read

توبہ کے مسافر (آخری حصہ )

تحریر؛ پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیمیں حیرت کے شدید جھٹکوں سے گزر رہا تھا میرے قلب و باطن میں بھونچال سا آگیا...

ماحولیاتی فنڈ کی منظوری،وزیراعظم کی کامیابی

تحریر؛ اسداللہ غالبہتھیلی پر سرسوں جمنا ایک محاورہ ہے، جس کا عملی مظاہرہ مصر میں منعقدہ ماحولیاتی کانفرنس کوپ 27 کے...

گہری سوچ بچار کی ضرورت

تحریر۔ شفقت اللہ مشتاق چند روز قبل میں ایک پہاڑی کے پاس سے گزرا تو میرے دل...

کرپشن کا خاتمہ کیسے ممکن ہے

تحریر ایم فاروق انجم بھٹہ عصر حاضر میں کئی ایک سماجی برائیاں نسل انسانی کو گھن کی...

راولپنڈی، کل صدر تا فیض آباد اسٹیشن میٹروبس سروس بند رہے گی

راولپنڈی میں کل صدر سے فیض آباداسٹیشن میٹروبس سروس بند رہے گی۔ انتظامیہ میٹروبس سروس کے مطابق...