Home پاکستان پی ٹی آئی حکومت میں شمولیت کیلئے مجبور کیا گیا، ایم کیو...

پی ٹی آئی حکومت میں شمولیت کیلئے مجبور کیا گیا، ایم کیو ایم پاکستان کا دعویٰ

پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کے ساتھ سیاسی دوریاں اختیار کرنے کے ایک ہفتے کے بعد ہی متحدہ قومی موومنٹ پاکستان نے دعویٰ کیا ہے کہ 2018 کے عام انتخابات کے بعد عمران خان کی زیر قیادت حکومت میں شامل ہونا ان کا اپنا انتخاب نہیں تھا بلکہ وہ ایسا کرنے پر ‘مجبور’ تھے۔

ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما فیصل سبزواری کا کہنا تھا کہ جب پارٹی نے شروع میں اتحاد چھوڑنے کا فیصلہ کیا تو سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا گیا اور ایم کیو ایم پاکستان کے کارکنوں اور یہاں تک کہ رہنماؤں کو گرفتار کیا گیا۔

ایم کیو ایم پاکستان کا حکومت سے علیحدگی کا اعلان، متحدہ اپوزیشن سے معاہدے پر دستخط

انہوں نے یہ دعویٰ بدھ کو رات دیر گئے بہادر آباد میں منعقدہ پارٹی کے کارکنوں کے اجلاس میں کیا جہاں سینئر رہنما سینیٹر فیصل سبزواری نے 2018 کے عام انتخابات کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال کا بھی ذکر کیا جب ایم کیو ایم پاکستان نے پی ٹی آئی قیادت کے ساتھ معاہدہ کیا تھا جس میں سندھ کے شہری علاقوں میں مسائل کے حل کا وعدہ کیا گیا تھا۔مزید کہا کہ معاہدے کے تحت دیگر مطالبات کے علاوہ حیدرآباد میں ایک یونیورسٹی قائم کی جانی تھی اور صوبے میں ایک بااختیار مقامی حکومت کا نظام قائم کیا جانا تھا۔

انہوں کسی فرد یا ادارے کا نام نہیں لیا کہ کس نے ان کی پارٹی کو 2018 میں پی ٹی آئی کی حکومت میں شامل ہونے پر مجبور کیا تاہم پارٹی کارکنوں کو خطاب میں مشورہ دیا کہ حکومت میں شمولیت کا فیصلہ ایم کیو ایم پاکستان کی قیادت کی ‘مرضی کے خلاف’ تھا جس کی ‘اسے بھاری قیمت چکانی پڑی۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ عارف علوی کی قیادت میں پی ٹی آئی نے جو وعدے کیے تھے، انہیں کبھی پورا نہیں کیا گیا۔

حکومت سے علیحدگی کے بعد ایم کیو ایم کے دونوں وفاقی وزرا مستعفی

انہوں نے کہا کہ پھر ہم نے احتجاج ریکارڈ کرانے اور وفاقی کابینہ چھوڑنے کا فیصلہ کیا، ہم نے اصولی طور پر فیصلہ کیا کہ ہم دوبارہ کابینہ کے رکن نہیں بنیں گے لیکن آپ سب جانتے ہیں کہ آگے کیا ہوا، ہمارے کارکنوں اور سینئر لیڈروں کو بھی گرفتار کر لیا گیا، ہم شدید دباؤ میں آئے اور اپنے فیصلے کے نتائج اور انتقامی کارروائی کا سامنا کیا۔

اپنے خطاب میں پارٹی کے کنوینر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے پاکستان پیپلز پارٹی کے ساتھ پارٹی کے حالیہ معاہدے کا دفاع کیا جس کی وجہ سے پی ٹی آئی حکومت سے اس کا سیاسی اختتام کو پہنچا۔

انہوں نے کہا کہ یہ اس طرح کی بحرانی صورتحال میں ایم کیو ایم پاکستان کی کامیابی ہے کہ سندھ کی حکمران جماعت نے خود جگہ کی پیشکش کی اور تمام مسائل حل کرنے پر آمادگی ظاہر کی۔

انہوں نے سوال کیا کہ کیا یہ اس جماعت کی کامیابی نہیں جسے کچھ وجوہات کی بنا پر دیوار سے لگایا گیا، استحصال کا نشانہ بنایا گیا ہے لیکن اس کے باوجود قومی سیاست میں مرکزی مقام حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئی ہے جہاں تمام اداروں کو قومی دھارے کا حصہ سمجھا جاتا ہے۔

ایم کیو ایم سندھ حکومت میں اتحادی بن سکتی ہے، سعید غنی

خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے ساتھ اتحاد کے ماضی کے برے تجربات سے کوئی انکار نہیں کر سکتا لیکن اب ہم جس صورتحال کا سامنا کر رہے ہیں وہ مختلف ہے اور اس کے لیے مختلف حکمت عملی کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کارکنوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ یہ آپ کے صبر اور عزم کی کامیابی ہے کہ وہ تمام قوتیں جنہوں نے آپ کو نظرانداز کردیا تھا اب آپ کے پاس واپس آکر آپ کے مطالبات پوچھ رہی ہیں، وہ آپ کی شرائط پر معاہدہ کرنے کے لیے تیار اور بے چین ہیں، یہ کسی کی نہیں بلکہ آپ کی کامیابی ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Must Read

پاکستان کی ساکھ خراب کرنے والوں کے شر سے محفوظ رہنے کی ضرورت

اداریہ پاکستان میں الزام تراشیوں سے مخالف کو زچ کرنے کا عمل بہت پرانا ہے تاہم اب...

گجرات ڈویژن اور حافظ آباد کی عوام کا فیصلہ؟

تحریر؛ راؤ غلام مصطفیوزیر اعلی پنجاب چوہدری پرویز الہی نے گجرات کودسویں ڈویژن کا درجہ دینے کی منظوری کے بعد باقاعدہ...

عالمی معیشت میں خاندانی کاروبار

تحریر؛ اکرام سہگلدنیا بھر میں خاندانی فرموں کا غلبہ اب اچھی طرح سے قائم ہے: عوامی طور پر تجارت کی جانے...

گجرات ڈویژن اور انسانی ہمدردی

تحریر؛ روہیل اکبرگجرات پنجاب کا 10واں ڈیژن بن گیاجس سے وہاں کے لوگوں کو سہولیات ملیں گے اب انکا اپنا نظام...

ملک بھرمیں PTCL کی انٹرنیٹ سروسز متاثر

لاہور(سٹاف رپورٹر)ملک بھر میں پی ٹی سی ایل کی سروسز ڈاؤن ہو گئیں۔ پی ٹی سی ایل...