Home پاکستان ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی صحت کے شعبے میں تحقیق کیلئے بڑی رکاوٹ قرار

ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی صحت کے شعبے میں تحقیق کیلئے بڑی رکاوٹ قرار

پاکستان میں صحت کے شعبے میں تحقیق کے لیے ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی آف پاکستان (ڈریپ) ایک بڑی رکاوٹ کے طور پر سامنے آئی ہے کیوں کہ اس کے پاس ایسے تعلیم یافتہ افراد کی شدید کمی ہے جوکہ کلینکل ٹرائلز اور تحقیقی منصوبوں کی بروقت جانچ پڑتال کرکے ان کی منظوری دے سکیں۔

ان خیالات کا اظہار ماہرین صحت اور ریسرچرز نے پیرکے روز کراچی میں ہونے والی ریسرچ ایکسیلینس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئےکیا۔

ریسرچ ایکسیلینس کانفرنس کا انعقاد فارمیوو ریسرچ فورم کے تحت کیا گیا تھا اور اس موقع پر ملک بھر سے 19 ڈاکٹروں اور ماہرین صحت کو صحت کے مختلف شعبوں میں تحقیق کے لیے تین لاکھ روپے فی کس گرانٹ جاری کی گئی۔

کانفرنس سے آغا خان یونیورسٹی کے کلینکل ٹرائلز یونٹ کے ڈائریکٹر پروفیسر سعید حامد، انڈس میڈیکل یونیورسٹی کے وائس چانسلر اور معروف کارڈیالوجسٹ پروفیسر فیروز میمن، آغا خان یونیورسٹی کے پروفیسر انور صدیقی، پروفیسر بدر فیاض زبیری، سید جمشید احمد، ہارون قاسم، شوکت علی جاوید، ڈاکٹر مسعود جاوید اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔

کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے آغا خان یونیورسٹی کے کلینیکل ٹرائلز یونٹ کے ڈائریکٹر پروفیسر ڈاکٹر سعید حامد کا کہنا تھا کہ پاکستانی افراد یورپ کے افراد سے نسلی اور جینیاتی طور پر مختلف ہیں اس لیے پاکستانی افراد میں دوائیں مختلف طریقے سے اثر کرتی ہیں، پاکستان میں دواؤں پر مقامی ریسرچ اور کلینکل ٹرائلز کرنے کی ضرورت ہے تاکہ مقامی بیماریوں کا مقامی حل تلاش کیا جاسکے۔

انہوں نے اس امر پر حیرت کا اظہار کیا کہ پاکستان میں ہیپاٹائٹس سی کے لاکھوں مریض جینوٹائپ تھری سے متاثر ہیں جس کا علاج کافی مشکل ہے لیکن بدقسمتی سے اس جینو ٹائپ پر پاکستان میں کوئی سیرحاصل ریسرچ موجود نہیں جس کی وجہ سے ایسے مریضوں کے علاج میں کافی مشکل درپیش ہوتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہندوستان میں یورپ میں بنی ہوئی کوئی بھی دوا اس وقت تک منظور نہیں کی جاتی جب تک اس دوا پر مقامی طور پر ریسرچ نہ کی جائے، ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی آف پاکستان میں مقامی تحقیق اور ریسرچ میں ایک بڑی رکاوٹ کے طور پر سامنے آئی ہے جہاں پر قابل اور تربیت یافتہ افراد کی شدید قلت ہے جو کہ ریسرچ کی اہمیت کو جانتے ہوئے ان منصوبوں کی جلد از جلد منظوری دے سکیں۔

فارمیوو ریسرچ فورم کے روح رواں اور پاکستان جرنل آف میڈیکل سائنسز کے ایڈیٹر شوکت علی جاوید کا کہنا تھا کہ پاکستان میں صحت کے شعبے میں انتہائی کم تحقیق کی جا رہی ہے، فارمیو ریسرچ فورم حال ہی میں قائم کیا گیا ہے جس کا بنیادی مقصد نوجوان ڈاکٹروں طلباء اور تحقیق کاروں کو صحت کے شعبے میں تحقیق کے لیے مالی اور تکنیکی معاونت فراہم کرنا ہے۔

مقامی دوا ساز کمپنی فارمیوو کے چیف ایگزیکٹو آفیسر سید جمشید احمد کا کہنا تھا کہ دنیا بھر میں دوا ساز ادارے طبی تحقیق کے لیے وسائل مہیا کرتے ہیں اور یہی وجہ ہےکہ کرونا کی وبا کے دوران محض 6 مہینے کے اندر اس بیماری کی ویکسین بنالی گئی جس کے نتیجے میں کرہ ارض پر کروڑوں انسانی جانیں بچائی جاسکیں۔

سید جمشید احمد کا کہنا تھا کہ ریسرچ گرانٹس کے لیے ملک بھر سے 46 نوجوان ڈاکٹروں اور تحقیق کاروں نے درخواستیں دی تھیں جن میں سے 19 کو پانچ کروڑ روپے جاری کیے گئے ہیں، ان کا کہنا تھا کہ ہر ریسرچر کو تین لاکھ روپے تک جاری کیے گئے ہیں اور ان کو اٹھارہ مہینے کے اندر اپنا ریسرچ پروجیکٹ مکمل کرکے اس کی رپورٹ جمع کرانی ہوگی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Must Read

بیوروکریسی بمقابلہ ٹیکنالوجی ذہنیت میں خلل ڈال رہی ہے

تحریر اکرام سہگل ڈیجیٹل دور میں داخل ہونے کے باوجود ہمارے سرکاری اداروں کا نقطہ نظر، ہمارے...

حکومت عوام دشمنی پر اُتر آئی ہے !

تحریر؛ شاہد ندیم احمدعوام کی بے لوث خدمت کرنے کی دعویدار حکومت نے اپنے قیام کے صرف تین ماہ کے ابتدائی...

پاک سر زمین کا نظام

زاد راہ ۔۔سیدعلی رضا نقوی پاکستان کے نظام کی خرابیوں کو ہم سب اکثر آشکار کرتے ہیں...

سر سبز و شاداب شہر

منشاقاضیحسب منشا شہروں کی آبادی بڑھ جانے سے مسائل بڑھ جاتے ہیں , وہ لوگ کتنے خوش...

ماہ زوالحجہ عبادات و فضیلت

تحریر رخسانہ اسد حج اسلام کا پانچواں رکن ہے حکم خداوندی کے سامنے سرتسلیم خم کرنے کیلے...